ہانگژو، چین: کارٹون اور اینیمیشن کے ساتھ دلچسپ مشرقی کہانیاں سنا رہا ہے

April 29, 2019 Off By Web Desk

ہانگژو، چین، 30 اپریل، 2019/ ژنہوا- ایشیانیٹ/۔۔ ہانگژو کے مشرقی چینی شہر کو چین کے “لو کیپٹل” کے نام سے بھی جانا جاتا ہے جہاں دلچسپ مشرقی کہانیوں نے جنم لیا جیسے “لیانگ ژو” کی کہانی جس کو مشرق میں رومیو اور جولیٹ کے طور پر جانا جاتا ہے۔ دریں اثنا، ہانگژو چین میں سب سے زیادہ ترقی یافتہ انٹرنیٹ اور ڈیجیٹل معیشت کی صنعت ہے۔ امیر ثقافتی زراعت اور کہانی کے عناصر کی طرف سے حوصلہ افزائی سے سب سے زیادہ ترقی کی حامل ٹیکنالوجی کے ساتھ ملکر نوجوان آرٹسٹوں اور ٹیکلنالوجی کے چھوٹے کاروباریوں نے اس کے اچھوتے انداز سے ہانگژو کو “کارٹون اور اینیمیشن کے دارالحکومت” میں تبدیل کردیا ہے۔ کارٹون اور اینیمیشن کی ترقی کے نتیجے میں یہ مشہور مشرقی شہر اپنے شہری قوت حیات کا مختلف انداز کےساتھ مظاہرہ کرچکا ہے۔

2005 سے ہانگژو ہرسال مئی میں شہری سطح پر ” کارٹون اینڈ اینیمیشن “کے نام سے تقریب منعقد کرتا ہے۔ گزشتہ 14 سالوں میں دنیا بھر سے مجموعی طور پر 16.2 ملین افراد اس میں حصہ لے چکےہیں۔ شیڈول کے مطابق 30 اپریل سے 5 مئی تک اس سال بھی ہانگژو میں 15 ویں چین انٹرنیشنل کارٹون اینڈ اینیمیشن فیسٹیول کا اہتمام کیا جائے گا۔  اس میں شرکت کے لیے ڈزنی، امریکہ سے سونی انٹرٹینمنٹ، ویبٹوون، جنوبی کوریا کا سب سے بڑا تفریحی پلیٹ فارم، اور کارٹون اور اینیمیشن بنانے والی کمپنیاں، آرگنائزیشنز اور دنیا بھر کے 86 ممالک اور خطوں سے تعلق رکھنے والے مہمان ہانگژو آرہے ہیں ۔ یہی وجہ ہے کہ یہ  اب تک صرف چین میں واحد قومی پیشہ ور کارٹون اور اینیمیشن کی نمائش کے ساتھ ساتھ سب سے بڑی، دنیا میں سب سے زیادہ مشہور اور با اثر کارٹون اور انیمیشن فیسٹیول ہے۔

ہانگژو اور کارٹون اور اینیمیشن کے درمیان مقابلہ کوئی اتفاقی نہیں ہے۔

” دی وائٹ اسنیک جادوگرنی”جاپانی سنیما کی تاریخ میں پہلی طویل رنگا رنگ اینیمیشن فلم 1958 میں پیش کی گئی تھی۔ 60 سال بعد چینی فلم سازوں کی ایک ٹیم نے اصل اینیمیشن فلم ” وائٹ اسنیک” جوڑی میں جاری کی ۔ دونوں ہی چین میں سب سے مشہور افسانوں پر مبنی تھیں۔ ہانگژو میں اس کی ترتیب کے ساتھ ، کہانی میں زیادہ ترمناظر اور نشانیاں مقامی لوگوں کی زندگیوں میں ہزاروں سال تک موجود تھیں۔

نصف صدی سے زائد عرصے تک ایک مقابلے کے طور پر دونوں فلموں نے مختلف اوقات میں مشرقی عناصر کے جمالیاتی اظہارات اور جدید ترین پروڈکشن کے ذریعے ایک جیسی تعریف کی ہے۔ مختلف اوقات میں کی گئی اینیمیشن قدیم مشرقی محبت کی کہانی کو نئی زندگی دی چکی ہے جو ہانگژو سے تعلق رکھتی ہے۔ “ننھی جلپری” کا چینی ورژن دنیا کو اس کی خوبصورتی اور دلکشی کے بارے میں بتاتا ہے۔

حالیہ سالوں میں کارٹون اور اینیمیشن کی صنعت کو چین میں ایک روشن مستقبل کی ضامن صنعت کے طور جانا جا رہا ہے۔

2005 میں ہانگژو میں پہلا چین انٹرنیشنل کارٹون اینڈ اینیمیشن فیسٹیول منعقد ہواجس کے بعد ہانگژو کو چین کی واحد قومی پیشہ ورانہ کارٹون اور اینیمیشن نمائش کے لئے مستقل مقام کا درجہ دیا گیا۔ اس کے بعد سے ” ہانگژو ماڈل ” کو چین کے کارٹون اور اینیمیشن صنعت کے طور پر کھول دیا گیا ۔ 10 سے زائد برسوں تک کارٹون اور اینیمیشن کی صنعت کے لئے مددگار پالیسیوں کے ایک سلسلے کے ساتھ ہانگژو نے بہت سے عمدہ ملکی اور غیر ملکی کارٹون اور اینیمیشن کمپنیوں اور تخلیق کاروں کو اپنی طرف متوجہ کیا ہے۔ اس طرح، چینی کارٹونسٹ اور اینیمیٹرز چینی کارٹون اور اینیمیشن اسٹوریز اور برانڈز بنانے کے مشن میں مصروف ہوگئے ہیں۔

لیو جیان ایک چینی کارٹونسٹ ہیں جنھوں نے 2018 کے اکیڈمی ایوارڈز میں شہرت حاصل کی جہاں ان کو بطور چینی اینیمیشن ایڈیٹر کے ایک آسکر جج کے طور پر منتخب کیا گیا۔

میرے نقطہ نظر میں، اچھی فلمیں تخلیقی کرنے کے لیے لازمی ہے کہ اس میں اچھی کہانیوں کے ساتھ اچھی دنیا کا جائزہ لیا گیا ہو۔ گزشتہ دسمبر، اساتذہ اور طالب علموں کے ساتھ لیو جیان کی ٹیم نے اینیمشن ورک ” لیانگژو” تخلیق کیا جو لیانگژو تہذیب سے5,000  سالوں سے جڑےعناصر کے ساتھ لیانگژو ثقافت کی اصل اور ارتقاء کے بارے میں بتاتا ہے، جیسے کہ ڈیمز، دیواریں، نیلم اور تاٹی ڈیزائن۔

ظاہر ہے اس قدیم ثقافتی شہر میں تخلیق کار، کارٹونز اور اینیمیشنز کے ساتھ گہرے ثقافتی جینوں کا مظاہرہ کرنے اور مشرقی جمالیاتیات کو ظاہر کرنے کے لئے پرعزم ہیں۔ چین کے کارٹون اور اینیمیشن مارکیٹ کے عروج کے ساتھ، دیگر ممالک کے بہت سے فلم ساز چینی ثقافت کی تلاش اور چینی کہانیاں بتانے کے مواقع حاصل کرنے کے لیے چین کے ساتھ تعاون کرنے کی کوششیں کر رہے ہیں۔

ڈزنی چین کے مینیجنگ ڈائریکٹر مارک ہینڈلر، 2017 چین انٹرنیشنل کارٹون اور اینیمیشن فیسٹیول میں ڈزنی چین کی نئی فلم “اسٹچ اینڈ ای” (این لنگ اینڈ اسٹچ) کی تخلیق کا تجربہ بیان کرتے ہیں کہ جب عملہ ہوان شنگ کے خوبصورت انداز پر توجہ مرکوز کرنے کے بجائے چینی کہانیاں ڈھونڈنے کے لئے دیہی علاقوں میں آگے تک چلا گیا تھا۔ اس فلم میں بہت سے چینی ثقافتی علامات جیسے ہوان شنگ ، ژی دی اور جنوبی انہوئی صوبے میں ہوانگ کن شامل ہیں۔

اینیمیشن ایک زبان ہے جس میں ثقافتیں دنیا میں جاتی ہیں۔ بہت سالوں پہلے چینی فلم کی صنعت کے ایک پیشوا ژیا یان نے کہا تھا کہ ” پی آر سی کی ابتدائی فلمیں جو حقیقی معنوں میں دنیا بھر میں جاری ہوئیں کارٹون تھے” ۔ ہانگژو چینی کارٹون اور اینیمیشن کے مرکز کی 15 سال سے تعمیر کر رہا ہے اور دلچسپ مشرقی کہانیوں کو کارٹون اور اینیمیشن کے ذریعے چین کی آواز بن کر دنیا میں پہنچا رہا ہے ۔

ذریعہ: چین انٹرنیشنل کارٹون اینڈ اینیمیشن فیسٹیول کا آفس